شہدائے غزہ کی تعداد میں اضافہ

(این ایچ نیوز پاک )غزہ پر صیہونی حملوں میں تینتالیس فلسطینی شہید اور دو سو چھیانوے زخمی ہوچکے ہیں۔

غزہ میں وزارت صحت نے بدھ کو ایک بیان جاری کرکے بتایا ہے کہ صیہونی فوج کے حالیہ حملوں میں شہید ہونے والوں میں تیرہ بچے شامل ہیں ۔

فلسطینی ذرائع کی رپورٹ کے مطابق صیہونی فوج نے بدھ کو غزہ میں ایک غیر فوجی گاڑی پر  ڈرون حملہ کیا جس میں کم سے کم تین عام شہری شہید اور متعدد زخمی ہوگئے۔

فلسطینی ذرائع نے اسی کے ساتھ بتایا ہے کہ استقامتی محاذ نے صیہونی حملوں کے جواب میں بدھ کو  صیہونی کالونیوں پر راکٹ برسائے ہیں ۔

اس رپورٹ کے مطابق فلسطینی مجاہدین کے میزائیلی حملوں کے بعد  صیہونی کالونی اشدود اور عسقلان میں حملے کے سائرن کے ساتھ ہی لوگوں میں زبردست خوف و ہراس پھیل گیا۔

 

اسی کے ساتھ جہاد اسلامی فلسطین کی فوجی شاخ سرایا القدس نے ایک بیان جاری کرکے ، غزہ کی شمالی پٹی سے ملحقہ صیہونی فوج کے ٹھکانوں پر  مارٹر توپوں سے حملے کی خبر دی ہے۔

 فلسطینی عوام کی رضاکار فورس الناصر صلاح الدین بریگیڈ نے بھی ایک مختصر بیان جاری کرکے بتایا ہے کہ  مقبوضہ نقب میں صیہونی حکومت کی حستریم ایئر بیس کو راکٹوں سے  نشانہ بنایا گیا۔ صیہونی ذرائع  نے بدھ کی دوپہر تک فلسطینیوں کے  میزائلی حملوں میں کم سے کم پانچ صیہونیوں کی ہلاکت اور سو سے زائد کے زخمی ہونے کی تصدیق کی ہے-

صیہونی میڈیا نے اسی کے ساتھ مقبوضہ فلسطین میں اسرائیلی تنصیبات اور اہم عمارتوں کو وسیع نقصان پہنچنے کی خبردی ہے۔ 

اس دوران ، ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ صیہونی حکومت نے اقوام متحدہ کے نمائندے کی فائر بندی کی تجویز مسترد کردی ہے۔ اس رپورٹ کے مطابق مغربی  ایشیا میں قیام امن کے امور میں اقوام متحدہ کے نمائندے ٹور ونس لینڈ نے صیہونی حکومت اور فلسطینیوں کے درمیان جنگ بندی کی تجویز پیش کی تھی لیکن تل ابیب نے اس کو قبول کرنے سے انکار کردیا ہے۔

 ایک فلسطینی ذریعے نے بتایا ہے کہ تل ابیب نے جنگ بندی کی تجویز ایسی حالت میں مسترد کی ہے کہ اقوام متحدہ کے نمائندے ٹور ونس لینڈ نے خبردار کیا ہے کہ اگر فوری طور پر فائر بندی نہ ہوئی تو  ایک ایسی ہمہ  گیر جنگ شروع ہوسکتی ہے جس کو کنٹرول کرنا دشوار ہوگا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے